وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا کے مشیر برائے ایکسائز،ٹیکسیشن اینڈ نارکوٹکس کنٹرول خلیق الرحمن نے کہا ہے کہ قبائلی اضلاع کے عوام کی دہشت گردی کے خلاف قربانیاں تاریخ کا حصہ بن چکی ہے۔ قبائلی اضلاع کے عوام کی ملک کے لئے دی گئ قربانیاں رائیگاں نہیں جائے گی۔انہوں نے کہا ہےکہ وزیر اعظم عمران خان کے وژن کے مطابق اور وزیراعلی خیبرپختونخوا محمود خان کی قیادت میں قبائلی اضلاع کے عوام کو ترقی کے قومی دھارے میں شامل کرنے کے لئے مشاورتی اجلاسوں کا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے۔قبائلی اضلاع کے عوام کو زندگی کی تمام تر بنیادی سہولیات کی فراہمی پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔ ایکسیلریٹیڈ ایمپلیمینٹیشن پروگرام(اے آئی پی-فیز2) کے دوسرے مرحلے کے تحت قبائلی اضلاع میں صحت اور تعلیم کی مد میں کثیر فنڈز مختص کردیا گیا ہے۔ جس کے تحت قبائلی اضلاع میں تعلیم اور صحت جیسے اہم شعبوں میں اصلاحات اور نوجوانوں کو تمام تر سہولیات کی فراہمی یقینی بنائی جائیگی۔ تحریک انصاف حکو مت کی شروع ہی سے پسماندہ اضلاع کی ترقی اور یہاں کے عوام کی زندگیوں میں مثبت تبدیلی لانا منشور کا حصہ رہا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے قبائلی ضلع خیبر کے ایک روزہ دورے کے موقع پر مشاورتی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ہے۔ اجلاس میں ممبر قومی اسمبلی اقبال آفریدی، ممبر صوبائی اسمبلی شفیق شیر آفریدی، ڈپٹی کمشنر خیبر ارشد منصور سمیت لائن ڈیپارٹمنٹ کے افسران، تاجر تنظیموں کے ممبران، قبائلی ضلع خیبر کے عمائدین اور عوام بھی موجود تھے۔مشاورتی اجلاس میں ڈپٹی کمشنر خیبر ارشد منصور نے ضلع خیبر میں مکمل اور جاری ترقیاتی منصوبوں کے حوالے سے حکومتی وفد کو تفصیلی بریفنگ دی۔ قبائلی عمائدین اور عوام نے مشاورتی اجلاس میں اپنی آراء اور تجاویز سے حکومتی ٹیم کو آگاہ کیا۔ مشاورتی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مشیر ایکسائز خلیق الرحمن نے کہا کہ حکومت قبائلی اضلاع کی دیر پا ترقی اور خوشحالی کے لئے سنجیدہ اور ٹھوس اقدامات اٹھا رہی ہے۔ آج کا مشاورتی اجلاس حکومت کی تمام قبائلی اضلاع کی ترقی کے لئے سنجیدگی کا مظہر ہے۔