خیبر پختونخوا کے وزیر برائے محکمہ خوراک اورسائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی محمد عاطف خان نے متعلقہ حکام کو ھدایات جاری کی ہیں کہ محکمے کے معطل اہلکاروں کے خلاف تحقیقات پوری شفافیت کیساتھ جلد اور بلا تعطل مکمل کی جائیں اور ذمہ دار افسران کو سزائیں دی جائے ان کا مزید کہنا تھا کہ محکمہ خوراک کو جدید خطوط پر استوار کرنے کیلئے تمام امور کو عموماً اور گوداموں کے نظام کو خصوصی طورپر ڈیجیٹائز کرنے کیلئے بھی ترجیہی بنیادوں پر اقدامات اٹھائے جائیں۔ انہوں نے مزید ہدایات دیں کہ تمام خوردنوش کی قیمتوں میں اضافے اور سپلائی کی کڑی نگرانی کی جائے، ان کا کہنا تھا کہ عوام کو ریلیف دینے کے لئے صوبائی حکومت تمام تر وسائل بروئے کار لا رہی ہے۔ یہ ہدایات انہوں نے محکمہ خوراک کی کارکردگی بارے میں جائزہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے دیں۔ اجلاس میں متعلقہ حکام نے بھی شرکت کی۔ اجلاس کو محکمہ خوراک کی کارکردگی ودیگر امور کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی گئی۔ اجلاس کو محکمہ خوراک کے جاری منصوبوں، افرادی قوت، فلور ملوں کو گندم کی فراہمی و سٹاک، چینی کی سٹاک، صوبے کے اضلاع میں محکمہ خوراک کے دفاتر کے کام کے طریقہ کار کے حوالے سے بھی تفصیلی بریفنگ دی گئی۔عاطف خان نے اعلیٰ حکام کو احکامات دی کہ ضلعی سطح پر افسران مارکیٹ میں معیاری اور سستے آٹے کی فراہمی ورمارکیٹ میں چکن، گوشت، پھل، سبزی وغیرہ کی سرکاری نرخوں پر دستیابی یقینی بنانے کیلئے باقاعدگی سے چیکنگ کریں۔ اس موقع پر وزیر محکمہ خوراک اور سائنس و انفارمیشن ٹیکنالوجی محمد عاطف خان نے کہا کہ ہمارا مقصد عام آدمی کو ہر قسم کی ریلیف دینا ہے، اس مقصد کے لئے پہلی فرصت میں محکمہ خوراک میں ڈیجیٹائز یشن سمیت ادارہ جاتی اصلاحات کے حوالے سے اقدامات مزید تیز کئے جائے۔انہوں نے کہا ہے کہ میرٹ کی بالادستی، اور شفافیت ہماری ترجیحات میں شامل ہیں۔ بد عنوانی اور کرپشن کے خلاف جنگ پاکستان تحریک انصاف کی منشور کا حصہ ہے اور محکمے میں سزا و جزاک کے قانون پر سختی سے عمل کیا جائے گا۔