محکمہ آبپاشی کے جملہ اُمور کو جدید خطوط پر استوار کرنے، اس کی تنظیمی استعداد کار کو بڑھانے، آمدن میں خاطر خواہ اضافہ کرنے اور صوبے کے آبی وسائل کے تحفظ اور ان کے بہتر استعمال کیلئے وسیع پیمانے پر اصلاحات کا ایک جامع پیکج تیار کرلیا گیا ہے ۔ جس میں بنیادی قانونی اور ادارہ جاتی اصلاحات اور افرادی قوت کی ترقی کے علاوہ آپریشنل مینجمنٹ کی بہتری اور ریونیو جنر یشن میں اضافے کیلئے متعدد اقدامات شامل ہیں۔ قانونی اصلاحات کے تحت واٹر ایکٹ ، ریور پروٹیکشن ایکٹ ، کینال اینڈ ڈرینج ایکٹ کے موثر نفاذ کیلئے متعدد اقدامات کے علاوہ لیزاور این او سی کے عمل میں تبدیلی اور بہتری شامل ہیں۔
یہ بات وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان کی زیر صدارت محکمہ آبپاشی میں اصلاحات کے حوالے سے منعقدہ ایک اجلاس میں بتائی گئی ۔ اجلاس کو محکمے کے مختلف شعبوں میں نافذ کی جانے والی اصلاحات اور اُن اصلاحات پر عمل درآمد کیلئے تیار کردہ ایکشن پلان کے بارے میں تفصیلی بریفینگ دی گئی ۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ ماضی میں محکمہ آبپاشی نے صرف انفراسٹرکچر کی ترقی پر کام کیا ہے لیکن آبی وسائل کی مینجمنٹ پر کوئی خاص توجہ نہیں دی گئی ۔ اب محکمہ انفراسٹرکچر کی بہتری کے ساتھ ساتھ آبی وسائل کے تحفظ اور اُن کے بہتر استعمال پر خصوصی توجہ دی جارہی ہے اور اس مقصد کیلئے انٹگریٹڈواٹر ریسورس مینجمنٹ اسٹرٹیٹجی تشکیل دی گئی ہے اور اس اسٹر ٹیٹجی پر عمل درآمد کیلئے واٹر ریسورس مینجمنٹ اتھارٹی اور واٹر ریسورس کمیشن کا قیام عمل میں لایا گیاہے ۔ اجلاس کو آگاہ کیا گیا کہ آبی ذخائر کی موثر انداز میں آپریشنل مینجمنٹ کو یقینی بنانے کیلئے محکمہ آبپاشی کے تمام وسائل اور املاک کا سروے کیا جارہا ہے اور تجاوزات کی نشاندہی کی گئی ہے ۔ علاوہ ازیں اب تک مکمل شدہ ڈیموں کو اُن کے کمانڈ ایریا سے منسلک کیا جائے گا، نہروں کی بھل صفائی کیلئے مختص وسائل کے موثر استعمال کیلئے طریقہ کار وضع کیا گیا ہے جبکہ صوبے میں ٹیلی میٹری سسٹم نصب کیا جائے گا۔ ریونیو جنریشن کے تحت آبیانہ کی سٹریم لائننگ کے علاوہ صوبہ بھر میں محکمہ آبپاشی کی جائیدادوں کی نشاندہی کی جارہی ہے ۔ ہیومین ریسورس ڈویلپمنٹ کیلئے بھی متعدد اقدامات زیر غور ہیں جن میں پراجیکٹ پالیسی کے عین مطابق سٹاف کی ہائرنگ ، محکمانہ امتحانات کی سٹریم لائننگ ، پیشہ وارانہ سٹاف کی استعداد کار کیلئے متواتر ٹریننگ ، انفارمیشن ٹیکنالوجی کا استعمال وغیرہ شامل ہیں۔ اجلاس کو آگاہ کیا گیا کہ ادارہ جاتی ترقی کے اقدام کے تحت نئے ضم اضلاع میں محکمہ آبپاشی کو ترقی دینے پر خصوصی توجہ دی جارہی ہے ۔