خیبر پختونخوا کے وزیر قانون و پارلیمانی امور اور انسانی حقوق سلطان محمد خان نے کہا ہے کہ زونل کوٹہ ریشنلائزیشن میں پسماندہ علاقوں کے امیدواروں کے تحفظات دور کیے جائیں گے ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعرات کے روز چھٹے زون بنانے اور زونل کوٹہ ر یشنلائزیشن کے حوالے سے دوسرے اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا اجلاس میں ارکان صوبائی اسمبلی تاج محمد، پیر فدا محمد، پختون یار، سردار محمد یوسف زمان اورریاض خان کے علاوہ چیئرمین خیبر پختونخوا پبلک سروس کمیشن فریداللہ خان سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ سید جمال الدین شاہ اور دیگر افسران نے شرکت کی اجلاس کے دوران اس حوالے پہلے اجلاس میں تشکیل دی گئی دو ذیلی کمیٹیوں میں ایک ذیلی کمیٹی نے اپنی رپورٹ پیش کی اور وزیر قانون نے دوسرے ذیلی کمیٹی کے ممبران کو ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ آیندہ اجلاس تک اپنی سفارشات پیش کرے ۔ چیئرمین فریداللہ خان نے اجلاس کو موجودہ رائج زونل کوٹہ فارمولا کی بریفنگ دیتے ہوئے نئے زون کوٹہ فارمولا کے حوالے نئے تجاویز بارے تفصیلی بریفنگ دی۔ سلطان محمد خان نے تمام کمیشن ممبران پر زور دیتے ہوئے کہا کہ وہ مختلف زاویوں سے چھٹے زون بنانے اور زونل کوٹہ ریشنلائزیشن کے متعلق مزید جائزہ لےں اور اگلے اجلاس میں اپنی سفارشات پیش کرےں وزیر قانون نے کہا کہ اس حوالے سے تیسرا اجلاس جلد بلایا جائے گا جس میں پیش کردہ رپوٹوں پر حتمی سفارشات کابینہ کے اجلاس میں منظوری کے لئے پیش کی جائےں گی۔