وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے بدھ کے روز ضلع لوئر دیر کا ایک روزہ دورہ کیا جہاں انہوں نے متعدد ترقیاتی منصوبوں کا افتتاح کیا اور عوامی اجتماع سے خطاب کیا۔ وزیراعلیٰ نے دیر میں منڈا گرڈ اسٹیشن اور جندول گرڈ اسٹیشن کا افتتاح کیا جو باالترتیب 67 کروڑاور 50 کروڑ روپے کی لاگت سے مکمل کئے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ وزیراعلیٰ نے خیبر میڈیکل یونیورسٹی دیر کیمپس اور ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال تیمر گرہ کی اپگریڈیشن کا بھی افتتاح کیا۔ ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال کی اپگریڈیشن پر ایک ارب 64 کرو ڑ روپے لاگت آئی ہے ۔ انہوں نے گریویٹی واٹر سپلائی اسکیم خال اور بلامبٹ کینال کی بہتری کے منصوبوں کا افتتاح کیا جومجموعی طور پر 93کروڑ روپے کی لاگت سے مکمل کئے گئے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے اس موقع پر متعددمنصوبوں کا سنگ بنیاد بھی رکھا جن میں دیر یونیورسٹی کا قیام ، دریائے پنجکوڑہ پر آر سی سی پل کی تعمیر ، بلامبٹ میں سپورٹس ایرینا اور جمازیم کی تعمیر ، شہید چوک تیمرگرہ فلائی اوور کی تعمیر ، میاں کلے تا کمبٹ بائی پاس کی تعمیر ، تالاش بائی پاس روڈ کی تعمیر اور سپورٹس کمپلیکس تیمرگرہ کا قیام شامل ہیں۔ یہ منصوبے تقریباً پونے پانچ ارب روپے کے مجموعی تخمینہ لاگت سے مکمل کئے جائیں گے۔ وزیراعلیٰ نے اس موقع پر عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ماضی میں دیر کے منتخب عوامی نمائندوں نے محض باتوں کے علاوہ علاقے کی ترقی کے لئے کچھ نہیں کیا جبکہ پی ٹی آئی حکومت نے دیر کو ترقی کی راہ پر گامزن کردیاہے، دیر کے تمام میگا ترقیاتی منصوبے ٹریک پرہیں۔ محمود خان نے کہا کہ دیر موٹروے کا منصوبہ پورے علاقے کی ترقی کے لئے نہایت اہمیت کا حامل ہے، یہ صوبائی حکومت کا اپنا منصوبہ ہے جو 36 ارب روپے کی لاگت سے مکمل کیا جائے گا۔