خیبرپختونخوا کے وزیر برائے اعلی تعلیم کامران خان بنگش نے کہا ہے کہ خیبر پختونخوا میں پہلی مرتبہ ایجوکیشن سٹی کا قیام عمل میں لایا جارہا ہے جس کو پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ کے تحت چلایا جائے گا۔ ایجوکیشن سٹی میں سرکاری، نیم سرکاری اور پرائیویٹ یونیورسٹی، کالجز اور سکولز اپنے کیمپسز کھول سکیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انھوں نے یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ اپلائیڈ سائنسز سوات اور ہائر ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ خیبرپختونخوا حکومت کے درمیان مفاہمتی یادداشت پر منعقدہ دستخط کی ایک تقریب سے اپنے خطاب میں کیا۔انھوں نے کہا کہ حکومت خیبر پختونخواکے تحت ضم شدہ قبائلی اضلاع جنوبی وزیرستان میں اس کو تعمیر کیا جائے گا۔ جسکے لئے سات ہزار کنال اراضی بھی مختص کر دی گئی ہے اور اس پر 2.7 بلین روپے کی لاگت آئے گی۔ انھوں نے کہا کہ اس پر ٹینڈرز اور کیمپسسز بنانے کی رجسٹریشن دوماہ تک شروع کر دی جائے گی جبکہ ایجوکیشن سٹی میں کمرشل اور رہائشی بلاکس بھی بنائے جائیں گے۔ کامران بنگش نے کہا کہ ایجوکیشن سٹی کی نگرانی یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ اپلائیڈ سائنسز سوات کرے گی۔ انھوں نے خیبرپختونخوا حکومت کی ترجیحات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ نوجوانوں کو سستی اور بہترین تعلیم فراہم کرنا صوبائی حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔