صوبائی وزیرتعلیم شہرام خان ترکئی نے کہاہے کہ اصلاحات کے ذریعے امتحانی نظام میں بہتری لا رہے ہیں۔ تمام امتحانی ہال کی بذریعہ سی سی ٹی وی کیمروں مانیٹرنگ ہوگی، رٹہ کلچر پرقابو پانے کیلئے پیپرز میں قابلیت جانچنے والے سوالات شال ہوں گے تاکہ میرٹ اور شفافیت کو مزید تقویت ملے۔انہوں نے کہاکہ ہم نے اپنے بچوں کو مستقبل کلئے تیارکرناہے ہربچے کو ایک جیسی سہولیات اورمواقع دیے جائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہو ں نے صوبے کے تعلیمی بورڈ سربراہان، محکمہ تعلیم کے ذیلی اداروں کے سربراہان اور ماہرین تعلیم کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ سیکرٹری ایجوکیشن ندیم اسلم چوہدری اوردیگراعلی حکام بھی اس موقع پر موجود تھے۔ اجلاس میں امتحانات کے انعقاد اور تعلیمی سیشن کے اجراء بشمول، امتحانی نظام و دیگرتجاویزاور کوروناصورتحال پرتفصیلی بحث ہوئی۔
صوبائی وزیرتعلیم نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ تمام تر توجہ طلباء پر دیں، امتحانی بورڈز بشمول تمام تعلیمی اداروں میں طلباء کو سہولیات کی فراہمی کیلئے اقدامات کریں۔ ٹیکنالوجی کے استعمال اور دستیابی کو یقینی بنایاجائے۔ انہوں نے کہاکہ ہم بہترین آئیڈیاز کوسپورٹ کرتے ہیں اور تعلیمی بہتری کیلئے تمام سٹیک ہولڈرز سے مشاورت کرکے لائحہ عمل تیارکیاجائیگا۔ شہرام خان ترکئی نے کہاکہ تمام بورڈ سربراہان کی ذمہ داری ہے کہ سرکاری اور نجی سکولز میں امتحانات سے پہلے کیمروں کی تنصیب کا عمل مکمل کریں اور بغیرکیمرے لگے سکولوں کو امتحانی ہال نہ دیں۔ انہوں نے کہاکہ ٹیچنگ ابھی ایک بہترین کیئرئربن گئی ہے مراعات، بہترین سروس سٹرکچر اور دیگرسہولیات اور مواقعوں کی بدولت اعلی تعلیم یافتہ نوجوان اب اس شعبے کی طرف راغب ہیں جس کی بدولت درس وتدریس کے نظام میں بہت بہتری آئی ہے۔ انہوں نے کہاکہ قبائلی اضلاع بشمول پورے صوبے میں اساتذہ کی ہزاروں آسامیاں مشتہر ہوچکی ہیں جس پرخالص میرٹ کے مطابق بھرتی ہوگی۔