صوبائی وزیر عشر و زکوۃ انور زیب خان نے کہا ہے کہ فاٹا انضمام کے بعد نئے ضم شدہ اضلاع میں ترقی کی راہ ہموار ہوئی ہے او وقتا فوقتا صوبائی حکومت مختلف نئے سسٹم کوقبائلی اضلاع تک توسیع دے رہی ہے جسمیں قبائلی اضلاع کے عوام کے مختلف مسائل حل کرنے کیلئے اے ڈی آر سسٹم بھی شامل ہیں جسے صوبائی کابینہ سے باقاعدہ منظو رکیا جا چکا ہے اور جلد اسے صوبائی اسمبلی سے بھی پاس کرائینگے ان خیالات کا اظہار انھوں نے تحصیل جمرودضلع خیبر میں زکوۃ چیک تقسیم کرنے کے حوالے سے منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیااس موقع پر ممبر صوبائی اسمبلی شفیق شیر،بصیرت خان شینواری،محکمہ زکوۃکے افسران سمیت لوکل زکوۃ کمیٹیوں کے ممبران نے بھی شرکت کی۔ انہوں نے کہا کہ قبائلی اضلاع کے عوام نے مشکل حالات میں بے پناہ قربانیاں دی ہے لیکن اب یہاں ترقی کا دور آپہنچا ہے جسکے لئے سب مل کر لگن سے کام کرینگے انکا کہنا تھا کہ صوبائی حکومت قبائلی عوام سے کئے گئے تمام وعدے پورے کرینگے اور اسی مقصد کیلئے وزیر اعلی کے احکامات کی روشنی میں تمام وزراء قبائلی اضلاع کے دورے کر رہے ہیں تاکہ بہتر طریقے سے عوام کے مسائل و مطالبات جان سکے۔ صوبائی وزیر نے کہا کہ محکمہ زکوۃمیں نا اہل لوگوں کیلئے کوئی جگہ نہیں کیونکہ زکوۃ غریبوں،یتیموں اور بیوؤں کی امانت ہیں اس میں کسی قسم کوتاہی برداشت نہیں کرینگے انہوں نے مزید کہا کہ زکوۃ کی تقسیم میں شفافیت اور منصفانہ تقسیم کیلئے نیا اور آسان سسٹم متعارف کر رہے ہیں تاکہ غرباء کو آسان اور با عزت طریقے سے زکوۃ فنڈ میسر ہو سکے صوبائی وزیر کا کہنا تھا کہ پچھلے ادوار میں زکواۃ فنڈ تقسیم کرنے کا طریقہ کار تسلی بخش نہیں تھا اسلئے ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ ہسپتالوں کو پچھلے ادوار میں دی جانے والے زکوۃ فنڈ کی مکمل ویریفیکیشن کی جائیگی انھوں نے لوکل زکوۃچئیرمین و لوکل زکوۃ کمیٹیوں کے ارکان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ زکوۃانتہائی حساس معاملہ ہے اسلئے زکوۃصرف حقداران کو دی جائے کیونکہ یہ صرف ان غرباء کی امانت ہے جو زکوۃکے اصل مستحقین ہیں۔تقریب کے آخر میں صوبائی وزیر نے ضلع خیبر کے لوکل زکوۃ کمیٹیوں ارکان میں چیکس تقسیم کئے جسے کمیٹیوں کے ارکان مستحقین میں شفاف اور منصفانہ طریقہ سے تقسیم کرینگے۔