خیبرپختونخوا حکومت نے صوبے میں سیاحت کے فروغ کے سلسلے میں ایک اور اہم قدم کے طور پر ٹوارزم پولیس کے قیام کے لئے 300 نئی آسامیاں پیدا کرنے کی منظوری دے دی ہے۔ ابتدائی طور پر صوبے کے سیاحتی ضلع سوات میں ٹوارزم پولیس کے76 ، اپر دیر میں 37، چترال میں 42 ، ایبٹ آبادمیں 71 اور مانسہرہ میں 74 اہلکار تعینات کئے جائیں گے۔ ٹوارزم پولیس کے ضلعی سطح کے افسران صوبائی پولیس سے ڈپوٹیشن پر تعینات کئے جائیں گے جبکہ کنسٹیبل سمیت دیگر اہلکارمجوزہ طریقہ کار کے تحت بھرتی کئے جائیں گے۔ ٹوارزم پولیس خیبر پختونخوا ٹوارزم اتھارٹی کے خصوصی ونگ کے طور پر کام کرے گی۔ یہ بات پیر کے روز وزیر اعلیٰ محمود خان کی زیر صدارت منعقدہ محکمہ سیاحت کے ایک ا جلاس میں بتائی گئی ۔ اجلاس کو صوبے میں سیاحت کو فروغ دینے کے لئے صوبائی حکومت کے جاری ترقیاتی منصوبوںپر پیش رفت سمیت اس سلسلے میں وزیراعظم پاکستان عمران خان کے احکامات پر عملدرآمد کی صورتحال کا تفصیلی جائزہ لیا گیا ۔ وزیراعظم کے معاون خصوصی سید ذوالفقار بخاری نے خصوصی طور پر اجلاس میں شرکت کی۔ سیکرٹری ٹوارزم عابد مجیداورایڈیشنل سیکرٹری ٹوارزم جنید خان کے علاوہ محکمہ کے دیگر حکام نے اجلاس میں شرکت کی۔ اجلاس کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ صوبے میں سیاحتی سرگرمیوں کے فروغ اور سیاحوں کو زیادہ سے زیادہ سہولیات کی فراہمی کے لئے دیگر محکموں کی ملکیتی ریسٹ ہاو¿سز اور دیگر جائیدادوں کو محکمہ سیاحت کے حوالے کرنے کے لئے قانون بنالیا گیا ہے جبکہ صوبائی کابینہ نے 167سرکاری ریسٹ ہاو¿سز کو محکمہ سیاحت کے حوالے کرنے کی باقاعدہ منظوری دیدی ہے۔ اسی طرح ان ریسٹ ہاو¿سز اور دیگر املاک سے آمدن حاصل کرنے کےلئے ان کو آو¿ٹ سورس کرنے پر کام جاری ہے۔ اسی طرح صوبے میں سیاحتی مقامات کی میپنگ کے لئے کنسلٹنٹس کی خدمات حاصل کی جارہی ہےں۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ صوبے میں ٹوارزم زونز کے قیام کے لئے چار مختلف مقامات کی پہلے ہی سے نشاندہی کی گئی ہے جن میں گنول مانسہرہ، مداکلشت چترال،ٹھنڈیانی ایبٹ آباداور منکیال سوات شامل ہیں۔ اسی طرح ملاکنڈ اور ہزارہ ڈویژن میں مزید آٹھ ٹوارزم زونز کے قیام کے لئے جگہوں کی نشاندہی کی گئی ہے جن میں کیلاش ویلی ضلع چترال، شاہی اور بن شاہی ضلع لوئر دیر، جگوڑہ، پیاہ ویلی، نیاگدرہ ضلع سوات، مرغوزار، مہابنڈ، ایلم ضلع بونیر، سیرن ویلی اور ماہنور ویلی ضلع مانسہرہ شامل ہیں۔اجلاس کو مزید بتایا گیا کہ ملاکنڈ اور ہزارہ ڈویژن کیلئے انٹیگریٹڈ ٹوارزم منیجمنٹ پلان تیار کیا جارہا ہے جس کے تحت مختلف محکمے ملکر ایک مربوط پلان کے تحت ان علاقوں میں سیاحت کے فروغ کے لئے مختلف کام کریں گی جن میں ریسٹ ایریاز کی تعمیر ، ٹوارسٹ فیسلیٹیشن سنٹر زکا قیام ، رابطہ سڑکوں کی تعمیر ، سیاحتی علاقوں کی صفائی، ریسکیو سروس اور سیکیورٹی کی فراہمی، سیاحوں کو طبی امداد کی بروقت فراہمی اور دیگر سہولیات شامل ہیں۔ مزید بتایا گیا کہ ملکی و غیر ملکی سیاحوں کی سہولت کے لئے ٹوارزم منیجمنٹ انفارمیشن سسٹم کا بھی اجراءکیا جارہا ہے جس کے تحت سیاحوں کو سیاحت سے متعلق تمام معلومات ، سہولیات اور خدمات آن لائن دستیاب ہوںگی۔ صوبے کے سیاحتی مقامات تک رابطہ سڑکوں کی تعمیر کے حوالے سے بتایا گیا کہ اس سلسلے میں سات مختلف منصوبوں کی منظوری ہو چکی ہے جن میں صوبے کے جنوبی اضلاع میں واقع قدیم سیاحتی مقام شیخ بدین تک سڑک کی تعمیر کے علاوہ ٹھنڈیا نی روڈ کی توسیع ، مانکیال تا باڑہ سہرائی سڑک، شیشی کوہ تا مداکلشت سڑک، سپاٹ ویلی روڈ، کالام تا کمراٹ روڈ، پترک تا کمراٹ روڈ اور تھل تا جاز بانڈہ روڈ شامل ہیں۔