صوبائی وزیر صحت و خزانہ تیمور سلیم جھگڑا نے کہا ہے کہ کووڈ19-کے دوران انتظامیہ اور محکمہ صحت کے اہلکاروں کی کاوشیں قابل تعریف ہیں اور انہی کاوشوں کی بدولت اللہ تعالیٰ کے فضل و کرم سے کورونا کی عالمی وباء کے دوران دوسرے ممالک کی نسبت پاکستان میں نقصان کم رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ضرورت اس امر کی ہے کہ ہم سکون سے بیٹھنے کی بجائے ابھی سے تیاری کریں کیونکہ بعض ماہرین کے مطابق موسم سرما کی ابتداء کے ساتھ اس وباء کی دوسری لہر متوقع ہے۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہارڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرایم ٹی آئی ٹیچنگ ہسپتال اور زنانہ ٹیچنگ ہسپتال کے دورے کے موقع پر میڈیا کے نمائندوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر کمشنر ڈیرہ یحیٰ اخونزادہ، سپیشل سیکرٹری ہیلتھ عادل اقبال، چیئر مین ایم ٹی آئی ارشد استرانہ، ڈین ایم ٹی آئی ڈاکٹر ارشد علی اور ڈپٹی کمشنر ڈیرہ محمد عمیر بھی انکے ہمراہ تھے۔ صوبائی وزیر صحت نے کہا کہ کورونا کے علاوہ دیگر وبائی امراض کی ویکسی نیشن بشمول پولیو کے قطرے پلانے کیلئے پہلے سے بڑھکر جوش و جذبے سے کام کریں تاکہ ہم اپنی آنے والی نسلوں کو ہر قسم کی وبائی امراض سے محفوظ بنا سکیں۔تیمور جھگڑا نے کہا کہ پولیو کی وباء کے بعد صوبوں میں محکمہ صحت کی کارکردگی کو جانچنے، علاقائی ضروریات کا جائزہ لینے اور بروقت ضروری آلات اور سٹاف کی فراہمی کیلئے میں نے اپنی مہم کا آغاز ڈیرہ اسماعیل خان سے اس لیے کیا ہے کیونکہ عام تاثر پایا جاتا ہے کہ جنوبی اضلاع کو ماضی میں ہمیشہ ہر مد میں نظر انداز کیا جاتا رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ کورونا کی وباء کے دوران ضلع ڈیرہ اسماعیل خان کی سول انتظامیہ اور محکمہ صحت سمیت تمام محکموں کی کارکردگی نہایت احسن رہی خصوصاً زائرین کیلئے قرنطینہ سنٹرز کے قیام اور اسکے بعد ٹرانزٹ (دیگر صوبوں اور اضلاع سے تعلق رکھنے والے زائرین) کی دیکھ بھال کیلئے جو اقدامات کیے گئے انکو نہ صرف مقامی بلکہ قومی سطح پر سراہا گیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس موقع پر ضلع ڈیرہ کے منتخب نمائندوں کی کاوشوں کو بھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔ صوبائی وزیر صحت و خزانہ نے بتایا کہ وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا کے وژن کے مطابق صوبے بھر کے تمام ڈی ایچ کیو ہسپتالوں کو اپ لفٹ کرنے کیلئے خصوصی فنڈ فراہم کیے جا رہے ہیں۔