خیبرپختونخوا کے وزیر اطلاعات شوکت یوسفزئی نے کہا ہے کہ وزیراعلی محمود خان کی وزیر اعظم عمران خان سے ملاقات معمول کی ملاقات ہے جس میں وزیراعظم کو وزراء اور محکموں کی کارکردگی کے حوالے سے بریف کیا جاتا ہے اور وزیراعظم بھی کارکردگی کے بارے میں پوچھتے ہیں۔ اپنے ایک ویڈیو پیغام میں صوبائی وزیر نے اس خبر کی تردید کی ہے کہ وزیراعلی نے وزیراعظم کو مخصوص وزراء اور ممبران صوبائی اسمبلی کے خلاف چارج شیٹ پیش کی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف میں کوئی گروپ بندی نہیں ہے نہ وزیر اعلیٰ کے خلاف کوئی گروپ بندی ہے اور نہ کسی کے خلاف کوئی شکایت ہے۔ وزیر اعلیٰ محمود خان بھی کابینہ کو ساتھ لے کر چلتے ہیں اور روزمرہ کے اجلاس اور میٹنگ میں شرکت کرتے ہے۔ وزیر اعلیٰ محمود خان کے آٹا مارکیٹ اور لیڈی ریڈنگ ہسپتال کا دورہ بھی کیا۔ انہوں نے غلط خبروں کو حکومت کے خلاف سازش قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سے حکومت کو کمزور اور غلط فہمیاں پیدا کرنے کی کوشش ایک مہم کے تحت کی جا رہی ہے شوکت یوسفزئی نے میڈیا سے استدعا کرتے ہوئے کہا کہ کوئی بھی خبر نشر کرنے سے پہلے اس کی تصدیق کرائے تاکہ غلط فہمیاں پیدا نا ہو کیونکہ اس سے میڈیا کے کریڈیبلیٹی پر بھی منفی اثرات پڑھتے ہیں۔