خیبرپختونخوا کے وزیر زراعت و لائیو سٹاک محب اللہ خان نے بدھ کے روز ضلع کرک کا دورہ کیا اس موقع پر انہوں نے وزیراعظم پاکستان کے زرعی ایمرجنسی پروگرام کے تحت بارانی علاقوں میں چودہ ارب روپے کے بارانی علاقوں میں پانی ذخیرہ کرنے کے منصوبوں کا معائنہ کیا ۔اس موقع پر ممبر قومی اسمبلی شاہد خٹک سابق صوبائی مشیر، ملک قاسم، سیکرٹری زراعت و لائیو سٹاک محمد اسرار خان۔ ڈی جی سائل کنزرویشن یاسین خان ، ڈی جی واٹر مینجمنٹ خورشید آفریدی، قائم مقام ڈی جی لائیوسٹاک ڈاکٹر عالم زیب،ضم شدہ اضلاع کے ڈائریکٹر زراعت رحمت الدین اور ضم شدہ اضلاع کے ڈائریکٹر لائیوسٹاک ملک ایاز وزیر بھی ان کے ہمراہ تھے۔ صوبائی وزیر نے اس موقع پر ضلع کرک میں لک کانڑہ منی ڈیم ، شہیدان واٹر ریزر وائزر اور انڈی کرک واٹرریزر وائزر اور دیگر منصوبوں کا معائنہ کیا ۔ اس موقع پرصوبائی وزیر کو بریفنگ دیتے ہوئے ڈی جی سائل کنزرویشن یاسین خان نے بتایا کہ مذکورہ منصوبے کے تحت بارش سے جمع ہونے والے پانی سے بنجر زمینوں کو قابل کاشت بنایا جائے گا اور فصلوں کو پانی مہیاں کرنے کے ساتھ ماہی پروری کے فروغ، مال مویشی اور گھریلو ضروریات کے لئے پانی کو استعمال میں لایا جائے گا اور اس منصوبے سے زیر زمین پانی کی سطح بھی بلند ہوگی صوبائی وزیر نے بریفنگ میں گہری دلچسپی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ مذکورہ منصوبے کا عنقریب وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا افتتاح کریں گے اور اس کی بدولت علاقے کے زمینداروں اور مال مویشی رکھنے والے کسانوں کو بہت زیادہ سہولیات میسر ہوں گی ۔ انہوں نے کہا کہ پورے صوبے میں زراعت و لائیواسٹاک کے شعبے میں جدید منصوبے شروع کیے جارہے ہیں تاکہ معیشت مستحکم ہونے کے ساتھ روزگار کے مواقع پیدا ہوں ۔