چیف سیکرٹری خیبر پختونخوا محمد سلیم خان نے اضلاع کی انتظامیہ اور ترقیاتی ومیونسپل اداروں کو ہدایت کی ہے کہ وہ بے ہنگم اور غیر قانونی تعمیرات روکنے، صفائی و نکاسی آب کو یقینی بنانے، کوڑا کرکٹ کوٹھکانے لگانے ،پینے کے صاف پانی کی فراہمی، تجاوزات کے خاتمے ، معیاری اشیائے خوردنی کی مقررہ نرخوں پر فراہمی ،سیاحوں کے لئے سہولیات اور کو دیگر خدمات کی شہریوں فراہمی کے لیے مروجہ قوانین اور ضوابط پر سختی سے عمل کر ائیں۔ انہوں نے ایبٹ آباد اور مانسہرہ کے لیے تجویز کئے گئے دو اضافی موٹروے انٹرچینج تعمیر کرنے کی غرض سے خیبرپختونخوا حکومت کی جانب سے مکمل تعاون فراہم کرنے کا یقین دلاتے ہوئے سی پیک منصوبے کی تکمیل کے حوالے سے چینی حکام کے عزم کو سراہتے ہوئے کہا کہ منصوبے کی تکمیل میں حائل رکاوٹوں کو ترجیحی بنیادوں پر دور کرنے کے اقدامات کئے جائیں گے ۔یہ ہدایات انہوں نے منگل کے روز کمشنر ہاؤس ایبٹ آباد میں سی پیک منصوبے پر پیش رفت ،سیاحتی مقامات پر صفائی اور نکاسی آب کی سہو لیا ت اور تعمیراتی قواعد و ضوابط کے حوالے سے منعقدہ اجلاسوں کی صدارت کرتے ہوئے جاری کیں۔کمشنر ہزارہ ڈویژن سید ظہیر الاسلام، ڈپٹی کمشنر ایبٹ آباد عامر آفاق، ڈپٹی کمشنر ما نسہرہ کیپٹن ریٹائرڈ اورنگزیب حیدر،ایبٹ آباد اور مانسہرہ کے ڈسٹرکٹ پولیس افسران عا بدمجید مروت وزیب اللہ خان، سی پیک پراجیکٹ ڈائریکٹر عبدالرحمن، کا غا ن ڈویلپمنٹ اتھا رٹی کے پراجیکٹ ڈائریکٹر خوا جہ فہیم سجاد،گلیا ت ڈویلپمنٹ اتھا رٹی کے مینجنگ ڈائریکٹر رضا حبیب اور این ایچ اے،لو کل گور نمنٹ اور میو نسپل افسروں نے اجلاس میں شرکت کی۔ سی پیک کے پراجیکٹ ڈائریکٹر نے اپنی بریفنگ میں اجلاس کو بتایا کہ سی پیک کا حویلیاں تا تھاکوٹ سیکشن 133.98ارب روپے کی لاگت سے آئندہ سال فروری میں مکمل کر لیا جائے گا جبکہ حویلیاں سے مانسہرہ تک منصوبے پر 84.45 فیصد کام مکمل ہوچکا ہے اور یہ حصہ آئندہ اکتوبر تک ٹریفک کے لیے کھول دیا جائے گا ۔انہوں نے بتایا کہ سی پیک کے تحت ضلع ایبٹ آباد سے گزرنے والی دو سر نگیں بھی مکمل کرلی گئی ہیں ۔چیف سیکرٹری محمد سلیم خان نے سی پیک پر ایبٹ آباد اور مانسہرہ کے لیے کمشنر ہزارہ کی جانب سے پی سی ون کی صورت میں وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو پیش کی گئی دواضا فی انٹرچینجو ں کی تجویز کوسر اہا۔ تا ہم انہوں نے ان رابطہ شا ہرا ہو ں کے لئے ناگزیر لوازمات، ان سے ہونے والی آمدن اور آمدورفت کی سہولیات کے حوالے سے مجو زہ منصوبوں کے قابل عمل ہونے کا جائزہ لینے کی ضرورت پر بھی زور دیا اور متعلقہ حکام کو اس ضمن میں ضروری ہدایات جاری کیں۔ انہوں نے محکمہ جنگلات کو سی پیک کے دونوں اطراف بھرپو ر شجر کا ری شروع کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے سی پیک حکام سے کہا کہ وہ پہاڑی علاقوں میں موٹروے کو لینڈ سلائیڈنگ سے محفوظ رکھنے اور موٹروے کی تعمیر سے تقسیم ہونے والی آبادیوں کو ملانے کے لیے گزر گا ہیں تعمیر کرنے کے اقدامات بھی کریں۔ ہزارہ کے سیاحتی علاقوں میں صفائی ستھرائی ،سیا حتی سہولیات اور تعمیراتی قوانین پر عمل درآمد سے متعلق ضلع ایبٹ آباد اور مانسہرہ کے اجلا سوں سے خطاب کرتے ہوئے چیف سیکرٹری محمد سلیم خان نے ضلعی انتظامیہ جی ڈی اے اور کے ڈی اے کو ہدایت کی کہ وہ کوڑا کرکٹ کو منظم اور محفوظ طریقے سے اکٹھا کر کے ٹھکانے لگانے کے لیے جامع اور پائیدار حکمت عملی تیار کر کے اس پر قانون کے مطابق سختی سے عمل کریں اور اس عمل میں ہوٹلوں کے لئے بھی کردار متعین کریں ۔ انہوں نے ڈپٹی کمشنر کو بھی ہدایت کی کہ وہ قیمتوں و معیا راور ہو ٹلو ں کے کرایوں پر کڑی نظر رکھیں اور سیا حو ں کو ہر ممکن سہولیات فراہم کریں تاکہ ہوٹل مالکان اور دکانداروں کو سیا حو ں کو لوٹنے کا موقع نہ مل سکے۔ انہوں نے ترقیاتی ادارو ں کو حکم دیا کہ وہ ہوٹل مالکان کی کی مشاورت سے سیا حو ں کے لیے ہوٹلوں کے مناسب کرائے متعین کریں اور غیر قانونی تعمیرات روکنے کے لئے قانون کو حرکت میں لا کر فوری اور سخت کارروائی کریں۔ چیف سیکرٹری نے رواں سیزن میں ہزارہ اورمالاکنڈ میں سیا حوں کی سہولت کے لئے ضلعی انتظامیہ، پولیس اور تر قیا تی ادا رو ں کی جانب سے کئے گئے انتظامات پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے ان انتظامات کو مزید بہتر بنانے کی ضرورت پر زور دیا تاکہ انہیں بین الاقوامی سیا حت کے معیا ر کے مطابق لاکر شما لی علاقوں کی سیا حت کو بیرونی سیاحوں کے لئے پرکشش بنایا جا سکے۔