صوبائی وزیر بلدیات شہرام خان ترکئی نے کہا ہے کہ پشاور میں ٹریفک کے مسائل مستقل بنیادوں پر حل کرنے کے لئے صوبائی حکومت کئی اقدامات اٹھا رہی ہے جن میں ٹریفک منیجمنٹ سسٹم کا نفاذ اور رنگ روڈ پر فلائی اوورز کے علاوہ انڈر پاسز کی تعمیر شامل ہے۔ صوبائی وزیر بلدیات نے ان اقدامات کا اعلان پشاور شہر میں ٹریفک کے مسائل مستقل بنیادوں پر حل کرنے کے لئے نیسپاک، پی ڈی اے اور اربن ڈویلپمنٹ ماہرین کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں رنگ روڈ پر واقع جمیل چوک اور پشتہ خرہ چوک پر فلائی اوورز بنانے کے حوالے سے اب تک کے اٹھائے گئے اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔ نیسپاک کے روڈز اور ٹریفک منیجمنٹ کے ماہرین نے مجوزہ فلائی اوورز کے ڈائزین اور دیگر امور پر اجلاس کے شرکاء کو بریفنگ دی۔ اجلاس میں بتایا گیا کہ فلائی اوورز کشادہ اور چھ رویہ ہوں گے جبکہ ان کے بننے سے پشاور شہر میں ٹریفک کے مسائل پر قابو پانے میں مدد ملے گی۔ ان فلائی اوورز کی ڈیزائننگ اس طرح کی گئی ہے کہ مستقبل میں ضرورت پڑنے پر انہی چوکوں میں انڈر پاسز بھی بنائے جا سکیں گے۔ نیسپاک ماہرین نے بتایا کہ ان منصوبوں کا پی سی ون تیار کرلیا گیا ہے۔ اس موقع پر شہرام خان ترکئی نے کہا کہ ان فلائی اوورز پر کام شروع کرنے سے قبل ٹریفک کے لیے متبادل روٹس کا تعین کیا جائے تاکہ شہریوں کو کسی قسم کی تکلیف یا پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ اجلاس میں یہ بھی بتایا گیا کہ ان مجوزہ فلائی اوورز پر کام شروع ہونے کے بعد یہ 18 ماہ کے قلیل عرصے میں مکمل کر لیے جائیں گے۔ صوبائی وزیر نے ہدایت کی کہ ان منصوبوں کا تیار شدہ پی سی ون ایک دن کے اندر پشاور ترقیاتی ادارے کے پاس جمع کرایا تاکہ اس پر جلد سے جلد محکمانہ کارروائی کو مکمل کیا جا
سکے۔ ان فلائی اوورز کو رواں مالی سال کے ترقی پروگرام کے تحت مکمل کیا جائے گا۔ شہرام خان ترکئی نے کہا کہ ہماری اولین ترجیح پشاور کے شہریوں کو سہولیات کی فراہمی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پشاور میں مزید فلائی اوورز بنانے پر بھی غور کیا جا رہا ہے۔