صوبائی وزیر اطلاعات شوکت علی یوسفزئی سے سابق صوبائی وزیر عبدالمنیم اور نجیب اللہ کے ساتھ آئے ہوئے شانگلہ کے مختلف وفود نے ان کے دفتر پشاور میں ملاقات کی اور علاقے میں جاری ترقیاتی منصوبوں اور مسائل پر تفصیلی بات چیت کی۔ وفود نے میرٹ پر جاری شانگلہ کے ترقیاتی منصوبوں پر اطمینان اور خوشی کا اظہار کیا۔صوبائی وزیر نے وفود کو یقین دلاتے ہوئے کہا کہ شانگلہ کو ترقیاتی ضلعوں کے برابر لانا اور یہاں کی تمام محرومیوں کا خاتمہ ان کی اولین ترجیح ہے اور وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان بھی پسماندہ اضلاع کی ترقی پر خصوصی توجہ دے رہے ہے۔ شانگلہ میں ریکارڈ ترقیاتی کاموں کا آغاز ہو چکا ہے جس میں مختلف سکولوں کا قیام، صحت کے مراکز کی اپگریڈیش،صاف پینے کے پانی کے منصوبے، راستوں کی پختگی اور سڑکوں کی تعمیر شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ پورا شانگلہ ان کا حلقہ ہے اور سیاسی وابستگی سے بالا تر ہو کر شانگلہ کے عوام کی خدمت کر رہے ہیں جن کی وجہ سے لوگ بھی ان پر اور حکومت پر اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف میرٹ اور شفافیت پر یقین رکھتی ہے اور ترقیاتی کام بھی میرٹ پر ہو رہے ہیں ترقیاتی کاموں میں شفافیت اور معیار کو برقرار رکھنے میں شانگلہ کے عوام کا کردار اہم ہے لوگوں کو جہاں بھی کوئی کوتاہی یا غیر معیاری کام نظر آئے تو اسکی نشاندہی کریں تاکہ ذمہ داروں کے خلاف فوری کارروائی عمل میں لائی جا سکے۔ صوبائی وزیر نے کہا کہ حکومت عوام کا پیسہ عوام پر خرچ کر رہی ہے جس کی وجہ سے لوگوں کو ماضی کے مقابلے میں ترقیاتی لحاظ سے بدلہ ہوا صوبہ ملے گا ماضی میں یہاں پر باریاں لینے والوں نے کرپشن کرکے عوام کا پیسہ اپنے اوپر لگایا جس کی وجہ سے شانگلہ پسماندہ رہا اور لوگوں کی محرومیوں میں اضافہ ہوا۔