خیبرپختونخوا کے وزیر اطلاعات اور شانگلہ پی کے 23 کے ایم پی اے شوکت علی یوسفزئی نے کہا ہے کہ شانگلہ کی تعمیر و ترقی کے لئے دو ارب سے زائد رقم کی منظوری دے دی گئی ہے جبکہ کانا میں ڈگری کالج ، لاڑئ میں بی ایچ یو اور بشام اسپتال کی آپ گریڈیشن کے لیے مختص کیے گیے کروڑوں روپے اس کے علاوہ ہیں۔صوبائی وزیر نے کہا کہ اس رقم سےضلع شانگلہ میں سڑکوں کا جال بچھایا جائے گااور گھر گھر پینے کے صاف پانی کی فراہمی یقینی بنائی جائے گی ، بارشوں سے متاثرہ زمینوں کے پشتے بھی تعمیر کیے جائیں گے جبکہ شانگلہ میں مزید 99 مساجد کو سولرائز کیاجارہاہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے اپنے دفتر میں حاجی محمد فرہاد کے ساتھ آئے ہوئے شانگلہ کے وفد سے ملاقات کے دوران کیا۔ انہوں نے کہا کہ کوز کانا دونئ روڈ ، بشام قلعہ روڈ، شنگ چمبر روڈ ، چچلو سانگڑئ روڈ اور گانشال برج کی منظوری بھی دے دی گئی ہے۔ شوکت یوسفزئی نے کہا کہ جائیکا (JICA) کے تحت بھی کروڑہ چکیسر روڈ ، کروڑہ اجمیر روڈ اور مالم جبہ ٹو شانگلہ روڈ تعمیر کیے جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ دندۓ شنگ، ملک خیل، پیرآباد الپوری ، لیلونئ اور ڈیرئ میں سڑکوں اور پانی کی سکیموں پر کام جاری ہے شوکت یوسفزئی نے وزیراعلیٰ محمود خان کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے اپنا وعدہ پورا کرتے ہوئے ضلع شانگلہ کی ترقی کو یقینی بنانے کے لیے خصوصی پیکیج دیا ۔ میری خواہش ہے کہ شانگلہ ضلع کی پسماندگی دور ہو یہ علاقہ پورے صوبے کے لئے ماڈل کے طور پر جانا جائے ۔ صوبائی وزیر نے کہا کہ جو علاقے ماضی میں محروم رہے ہیں اب ان کو فوکس کیا جائے گا انہوں نے کہا کہ پورا شانگلہ میرے لیۓ ایک گھر کی مانند ہے اور میں پورے ضلع کی ترقی کے لئے کام کروں گا۔شوکت یوسفزئی نے کہا کہ شانگلہ کی عوام نے جس فراخدلانہ انداز میں پاکستان تحریک انصاف کو ووٹ دیا ہے اسی فراخدلانہ طور پر ضلع کی پسماندگی دور کرنے کے لیے فنڈز دیئے جائیں گے انہوں نے کہا کہ جن علاقوں میں ابھی تک ترقیاتی کام شروع نہیں ہوئے کارکنوں کی مشاورت سے آئندہ ماہ وہاں نئے منصوبے شروع کیے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ترقیاتی کاموں کو مزید شفاف بنانے کے لیے ایک ہفتہ کے اندر ہر ویلج کونسل کی سطح پر مانیٹرنگ ٹیمیں بنائی جائیں گی جس میں پارٹی کے مخلص ورکروں کو شامل کیا جائے گا وزیر اطلاعات نے کہا کہ جن علاقوں میں پہلے ٹینڈرز ہوچکے ہیں اور ان پر کام ابھی تک بلاوجہ شروع نہیں ہوا ان ٹھیکداروں کے خلاف کارروائی ہوگی۔ شوکت یوسفزئی نے تمام محکموں پر واضح کیا کہ کرپشن اور غیر معیاری کام کو کسی صورت برداشت نہیں کیا جاۓ گا ۔