خیبر پختونخوا کے وزیر قانون نے کہا ہے کہ حقوق نسواں کے تحفظ کو یقینی بنانا صوبائی حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کے روز پشاور میں خیبر پختونخوا گھریلو تشدد بل 2019 برائے خواتین سے متعلق حکومتی و اپوزیشن اراکین صوبائی اسمبلی کی تجویز کردہ ترامیم کے حوالے سے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔اجلاس میں سیکرٹری لاءذکاءاللہ خٹک،سیدہ ندرت ماہر جنسیات،سوشل ویلفیئر ڈیپارٹمنٹ،چئیرپرسن وومن کمیشن ڈاکٹر رفعت سردار صوبائی محتسب رخشندہ ناز اور لیگل ڈرافٹر شگفتہ نوید نے شرکت کی۔اجلاس میں تمام تجویز کردہ ترامیم کا تفصیلی اورتقابلی جائزہ لیا گیا۔اس موقع پر وزیر قانون نے کہا کہ حقوق نسواں کا قانونی تحفظ، وفاقی اور صوبائی حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے اور اس معاملے میں کسی قسم کا سمجھوتہ نہیں کریں گے۔انہوں نے مزید کہا کہ ترمیمی بل کا ختمی فیصلہ ،سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی کے احکامات کے مطابق تشکیل دی گئی سیکشن کمیٹی کے اجلاس میں کیا جائے گا جس کے بعد بل صوبائی اسمبلی سے منظور کرانے کے لیے پیش کیا جائے گا۔